متحدہ طلبہ محاذ کے تحت القدس کانفرنس کا انعقاد، حکومت پاکستان سے یوم القدس کو سرکاری طور منانے کا مطالبہ

متحدہ طلبہ محاذ کے تحت القدس کانفرنس کا انعقاد، حکومت پاکستان سے یوم القدس کو سرکاری طور منانے کا مطالبہ

 
متحدہ طلبہ محاذ پاکستان کے تحت لاہورکے ایک نجی ہوٹل میں آزادی القدس طلبہ کانفرنس کا انعقاد کیا گیا جس میں فلسطینی طلبہ سمیت ملکی سیاسی ،مذہبی لسانی طلبہ تنظیموں کے رہنمائوں سمیت سیاسی جماعتوں کے مرکزی رہنمائوں نے بھی شرکت کی ۔
منعقدہ آزادی القدس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مقررین کاکہنا تھا کہ عالمی سامراجی قوتیں مسئلہ فلسطین کو فراموش کرنے کے لئے مسلم دنیا کو دہشت گردی سمیت معاشی مسائل میں الجھا رہی ہیں تا کہ اسرائیل کو تحفظ فراہم ہو سکے انکاکہنا تھا کہ مسئلہ فلسطین صرف عرب دنیا کا ہی نہیں بلکہ پوری مسلم امہ اور انسانیت کا اولین مسئلہ ہے اور اس کے منصفانہ حل کے بغیر خطے سمیت عالمی امن قائم نہیں ہو سکتا ہے، انہوں نے مزید کہا کہ فلسطین میں قبلہ اول پر صیہونی غاصبانہ تسلط کا خاتمہ صرف اور صرف مسلمانوں کے اتحاد سے ہی ممکن ہے انہوں نے مظلوم فلسطینیوں پر صیہونی مظالم کے نہ رکنے والے ستر سالہ سلسلہ کی بھی شدید مذمت کی۔لاہور میں منعقد آزادی القدس کانفرنس سے معروف سیاسی ،مذہبی جماعتوںکے مرکزی رہنمائوں نے خطاب کیا پی ٹی آئی سے اعجاز چوہدری ،تحریک منہاج القرآن سے خرم نواز گنڈا پور،پیپلز پارٹی سے عزیز چن ،مسلم لیگ ق سے کامل علی آغا اور مجلس وحدت مسلمین سے علامہ امین شہیدی نے خطاب کیا۔خرم نواز گنڈا پوری کا کہنا تھا کہ دنیا بھر میں اسرائیل کے ناپاک عزائم ناکام ہو رہے ہیں اور ضرورت اس امر کی ہے کہ مسلم دنیا متحد ہو جائے اور فلسطین کی آزادی کے لئے مشترکہ جدوجہد پر توجہ مرکوز کریں۔ان کا کہنا تھا کہ اسرائیل پوری انسانیت کا دشمن ہے اور دنیا بھر سے اسلامی مقدسات کا خاتمہ چاہتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ آج فلسطین جل رہا ہے اور قبلہ اول بیت المقدس صیہونی شکنجہ میں ہے۔سیدسرفراز نقوی نے مسئلہ فلسطین کو امت مسلمہ میں اتحاد کا وسیلہ قرار دیا اور کہا کہ یہی وجہ ہے کہ عالمی استکبار اور بین الاقوامی صیہونزم اس بات کی کوشش کر رہے ہیں کہ یہ مسئلہ، عالم اسلام کی ترجیحات سے ختم ہو جائے  پی ٹی آئی کے رہنماء اعجاز چوہدری نے کہا کہ مسئلہ فلسطین عمومی طور پر انسانیت کیلئے اور خاص طور پر عالم اسلام کیلئے انتہائی اہمیت کا حامل ہے، یہ مسلمانوں کے ایمان کا مسئلہ ہے، القدس کی آزادی ہر مسلمان کی دینی و ایمانی فریضہ ہے، بیت القدس سمیت مقبوضہ فلسطین کی آزادی کیلئے عالم اسلام کو متحد کرکے بھرپور جہاد ہونا چاہیئے، مسئلہ فلسطین کو فراموش کرنے اور اسرائیل کو تحفظ فراہم کرنے کیلئے دنیا بھر میں دہشتگردی کو پروان چڑھایا جا رہا ہے، مسلمان حکمران قبلہ اول کی بازیابی کیلئے عملی جدوجہد کریں۔مقررین نے کہا کہ دنیا بھر کی طرح پاکستان میں بھی ماہ رمضان المبارک کے آخری جمع الوداع کو عالمی یوم القدس بھرپور انداز میں منایا جائے گا، اس میں تمام سیاسی و مذہبی جماعتیں اور تمام شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والے افراد اور عوام بھرپور انداز میں شرکت کرکے مظلوم فلسیطنیوں سے یکجہتی اور صہیونی اسرائیل سے نفرت کا اظہار کریں اورعالمی سطح پر واضح پیغام دیں کہ فلسطین کاز کے حوالے سے پوری پاکستانی قوم متحد ہے۔القدس کانفرنس کے شرکا نے فلسطینی مزاحمتی تحریکوں حماس، حزب اللہ، جہاد اسلامی اور پاپولر فرنٹ کی بھرپور حمایت کا اعلان کیا اور اپیل کی کہ پاکستان کے عوام رمضان المبارک کے آخری جمعہ کو یوم القدس بھرپور انداز میں منائیں ۔کانفرنس کے اختتام پر مشترکہ طور پر قرار دادیں منظور کی گئیں جس میں فلسطینیوں کی حمایت اور جدوجہد آزادی کو جاری رکھنے کا عزم کیا گیا۔

Share this post

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے